Menu '=' videos '=.colection>
Welcome to the fan box786 -فین باکس 786 میں خوش آمدید

Pages

 




اے محبت تیرے انجام پہ رونا آیا 


جانے کیوں آج تیرے نام پہ رونا آیا 


یوں تو ہر شام امیدوں میں گزر جاتی ہے 


آج کچھ بات ہے جو شام پہ رونا آیا 


کبھی تقدیر کا ماتم کبی دنیا کا گلہ

منزل عشق میں ہر گام پہ رونا آیا 


مجھ پہ ہی ختم ہوا سلسلہ نوحہ گری 


اس قدر گردش ایام پہ رونا آیا 


جب ہوا ذکر زمانے میں محبت کا شکیل


مجھ کو اپنے دل ناکام پہ رونا آیا 


  --------- شکیل بدایونی --------


-----------------------------------------------------------------------------------------------------------
ہم دشت کے باسی ہیں اے شہر کے لوگو

یہ روح پیاسی ہمیں ورثے میں ملی ہے

دکھ درد سے صدیوں کا تعلق ہے ہمارا


آنکھوں کی اداسی ہمیں ورثے میں ملی ہے

جان دینا روائیت ہے قبیلے کی ہماری

یہ سرخ لباسی ہمیں ورثے میں ملی ہے

جو بات بھی کہتے ہیں اتر جاتی ہے دل میں 
تاثیر جدا سی ہمیں ورثے میں ملی ہے  


جو ہاتھ بھی تھاما ہے سدا ساتھ رہا ہے 

احباب شناسی ہمیں ورثے میں ملی ہے

-----------------------------------------------------------------------------------------------------------

سرد راتوں کے مہکتے ہوۓ سناٹوں میں
جب کسی پھول کو چومو گے تو یاد آؤں گا
شال پہناۓ گا اب کون دسمبر میں تمھیں
بارشوں میں کبھی بھیگو گے تو یاد آؤں گا
اب تو یہ اشک میں ہونٹوں سے چرا لیتا ہوں
ہاتھ سے خود انھیں پونچھو گے تو یاد آؤں گا
اس میں شامل ہے میرے بخت کی تاریکی بھی
تم سیاہ رنگ جو پہنو گے تو یاد آؤں گا


  -------------------------------------------------------------------------------------


ماہ جبینوں کی اداؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

اس کا مطلب ہے بلاؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

باب تاثیر سے ناکام پلٹ آئ ہیں

اس لئے اپنی دعاؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

تیری دہلیز پہ جکھنے کا سوال آیا تھا

میں زمانے کی اناؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

جو غریبوں کا دیا۶ پھونک کے تھم جاتی ہیں

ایسی کم ظرف ہواؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

عرش والے میری توقیر سلامت رکھنا

فرش کے سارے خداؤں سے الجھ بیٹھا ہوں

ایک کم ظرف کی بے ربط جفا کی خاطر

شہر والوں کی وفاؤں سے الجھ بیٹھا ہوں


  -------------------------------------------------------------------------------------


SEARCH GHAZALS
Reactions:

Post a Comment

 
Top