Menu '=' videos '=.colection>
Welcome to the fan box786 -فین باکس 786 میں خوش آمدید

Pages

 


            

--------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------

کبھی تم نظر آؤ                      


یقین مانو صبح سے شام تک ہم کو
بہت سے لوگ ملتے ہیں
نگاہوں سے گزرتے ہیں
کوئ انداز تم جیسا
کوئ ہم نام تم جیسا
کسی کی آنکھیں تم جیسی
کسی کی باتیں تم جیسی
مگر تم ہی نہیں ملتے
یقیں مانو بہت بے چین پھرتے ہیں
بڑے بیتاب رہتے ہیں
دعا کو ہاتھ اٹھتے ہیں
دعا میں یہی کہتے ہیں
لگی ہے بھیڑ لوگوں کی
مگر اس بھیڑ میں ہم کو
کبھی تم نظر آؤ
کبھی تم نظر آؤ

---------------------------------------------------------------------------------------------------



_____ ہوۓ جو تم غیر______
اپنی پلکوں پہ ستاروں کا چراغاں لیکر
تری محفل میں کوئ شوریدہ سر آیا ہے
کئ صدیوں کی تھکن آنکھوں میں لئے
اپنے سب خواب تری دہلیز پہ دھر آیا ہے
خواب سایہ ہے کچھ دیر میں ڈھل جاۓ گا
دل تو ناداں ہے اس آگ میں جل جاۓ گا
عشق ہے وہ آگ کہ جلانے کے بہانے مانگے
گلستاں چھوڑ کے صحرا میں ٹھکانے مانگے
شام ہوتے ہی پگھلتے ہیں شمع کی مانند
جن لوگوں نے محبت کے خزانے مانگے
یونہی بے سبب ہر شے اداس لگتی ہے
وہ دور ہے لیکن آس پاس لگتی ہے
دل مانند صحرا بجھا بجھا سا ہے
اسے بھی شائد وصل کی پیاس لگتی ہے
آج آؤ چاندنی میں محبت کی کہانی لکھیں
ھوئ کس طرح برباد اپنی جوانی لکھیں
داغ سینے کے اسی بہانے دھو لیں
آخری بار آؤ آج گلے لگ کے رو لیں
آج کی بات ہے کل تو غیر کی ہوجاۓ گی
پھر پھول کھلیں گے نہ ساون کی جھڑی آۓ گی
یہی انجام محبت تھا کہ ناشاد ہونا تھا
مجھے برباد ہونا تھا تجھے آباد ہونا تھا
کامران حیدر_____ مجھے دل میں رکھنا

    ------------------------------------------------------------------------------------------------




                                  مجبوری 
ٹوٹ   گیا   ضبط    مسلسل   بہ   نکلا   سیل    رواں 
آج   پھر   ٹوٹ   کے  ساون   کی   گھٹا   برسے گی
دل   نہ    بھلے  گا  کسی  طور  تیرے  وعدوں  سے 
اب   کے   دیوانے  کو تیرے  شہر کی فضا ترسے گی
چھوڑ   جاؤں    گا    اس   شہ  ر  منافق    کو   جہاں
خون  جگر  دے  کے  آستینوں  کے  سانپ ملتے ہیں
میرے     ہمدم    تم  میرے پاؤں کی زنجیر نہ بن جانا 
میں وہاں جاؤں گا جہاں پھولوں سے زخم سلتے ہیں 
شہر  ہے    سارا  ناصح  دیوانے کی ضرورت کیا ہے     
بچھڑنے   والے   کو    بہانے   کی  ضرورت  کیا ہے 
مجھے   راستے    کی    تاریکی  سے   ڈرانے   والی 
میری   راھوں   کو   تیرا   عشق     اجالا     دے    گا 
میں     آج     چھوڑ   تو    جاؤں   تیرا   شہر    لکین 
کون     میرے     بعد     تجھ    کو   سنبھالا   دے  گا 


------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------


رات اس نے پوچھا تھا
تم کو کیسی لگتی ہے
چاندنی دسمبر کی ؟
میں نے کہنا چاہا تھا
سال و ماہ کے بارے میں
گفتگو کے کیا معنی ؟
چاہے کوئی منظر ہو
دشت ہو ، سمندر ہو
جون ہو ، دسمبر ہو
دھڑکنوں ‌کا ہر نغمہ
منظروں پر بھاری ہے
ساتھ جب تمہارا ہو
دل کو اک سہارا ہو
ایسا لگتا ہے جیسے
ایک نشہ سا طاری ہو
لیکن اس کی قربت میں
کچھ نہیں کہا میں نے
تکتی رہ گئی مجھ کو
چاندنی دسمبر کی 


-------------------------------------------------------------------------------------------------------

                                                                               دکھ بولتے ہیں




___ دکھ بولتے ہیں ___
جب سینے اندر سانس کے دریا ڈولتے ہیں
جب موسم سرد ہوا میں
چپ سی گھولتے ہیں
جب آنسو
پلکیں رولتے ہیں
جب سب آوازیں اپنے اپنے بستر پر سو جاتی ہیں
تب آہستہ آہستہ آنکھیں کھولتے ہیں
  دکھ بولتےہیں   

--------------------------------------------------------------------                                              



تاجدار حرم ہو نگاہ کرم
ہم غریبوں کے دن بھی سنور جائیں گے
والئ بیکساں کیا کہے گا جہاں

آپ کے در سے خالی اگر جائیں گے

کوئ اپنا نہیں غم کے مارے ہیں ہم

آپ کے در پہ فریاد لاۓ ہیں ہم

ہو نگاہ کرم ورنہ چوکھٹ پہ ہم
آپ کا نام لے لے کے مر جائیں گے
تاجدار حرم ہو نگاہ کرم______


--------------------------------------------------------------------------



یہ ہے میرا دیس 

                                                             
ہر  جا  اب  میخانے  ہوں  گے 
گردش   میں  پیمانے  ہوں گے 
خون   غریباں     سستا   ہو  گا 
روشن  عشرت  خانے ہوں گے 
رندوں  کی  تلوار   کے  نیچے 
مذھب  کے  دیوانے  ہوں  گے 
مذهب  ہی کی  اوڑھ کے چادر 
مذھب    کو   تاراج  کریں گے 
ابن   علی   کے  دشمن بن کے 
شمیر کے بیٹے راج کریں گے 
عادل  ہوں  گے  عدل  نہ  ہو گا 
دولت   ہوگی    فضل  نہ   ہوگا 
آزادی    کی     شکل      سہانی 
لکین   ھم   نے   قدر   نہ جانی 
مادر      پدر        آزادی     آئ
مذہب      کی      بربادی     آئی 
اندھرا    ہر   سو  گھور اندھیرا
آے    گا    کب    پاک    سویرا 
میرے     مالک     میرے    آقا 
حیدر   کا    بس  تجھ  سے ناتا
سیدھی    راہ  دکھا   دے ھم کو 
نیکی  کی  چال چلا  دے ھم کو 
ڈر   نہ   جس   کو  آندھی کا ہو 
ایسا   دیپ    جلا    دے  ھم  کو     
کامران حیدر / مجے دل میں رکھنا

                               ------------------------------------------------------------------------------------ 


                                                                              دعا               
 اس شاعر بے نوا  کی دعا ہے ساری امت کی دعا 

خاص  فضل  و کرم    سے   منظور  فرما ے خدا 

ناتواں   کمزور    بندوں    کا   سہارا   ہے  تو  ہی
دوسروں   کے   سنکڑوں    ہیں  ہمارا   ہے تو ہی
تیرے   بندوں   کے    ارادے   بیشک   نیک   ہیں 

پھر   بھی   کافر   مسلمانوں    کے  مقابل ایک ہیں 

خوار    ہیں    لاچار    ہیں     اب    جائیں    کہاں
تیرے   در   کو   چھوڑ  کر ھم ہاتھ  پھیلاین  کہاں


ے   خدا   کرم   فرما   ور  ھم  سب  کو  نیک  کر
محمّد   مصطفیٰ   کے  صدقے   سب  کو  ایک کر 

حیدر  کی    دعا   منظور      فرما     اے     کریم 

اپنے   بندے   کی   صدا    منظور  فرما اے  رحیم 
  
کامران حیدر / مجے دل میں رکھنا


              --------------------------------------------------------------------------------------------------



                                                                                    ماں کے نام             
پیار و   محبت  کا  گہوارہ  تھی  میری ماں

تاریکی   میں  روشن  ستارا تھی میری ماں
ہسنے   سے   اس   کے  کھلتی تھیں  کلیاں

بہاروں  کا  مہکتا  نظارہ   تھی  میری  ماں
چہرے  سے  نور   کی   برستی  تھی کرنیں
عظمت   کا   اجلا   منارہ   تھی   میری  ماں
میری  راہوں  کے کانٹے  وہ  سدا چنتی رہی
زمانے   میں  جینے کا سہارا تھی میری ماں
دعاؤں نے اس کی مجے بخشی ہیں گہرائیاں

سمندر  ہوں  میں  تو  کنارہ  تھی  میری  ماں
اس کی   تعریف    اس    سے    زیادہ  کیا ہو
دنیا  ہی  میں جنت  کا اشارہ  تھی   مری  ماں
دل   کی   باتیں   حیدر   او  ر کس سے کہوں
میرے سبھی لفظوں کا استعارہ تھی  میری ماں 
کامران حیدر/ مجے دل میں رکھنا


          


                                                                         ادراک
 یہ دنیا ہے سانپ نگر
  جو  بھی  بین بجانے


  یہ اسی کی ہو جائے  



کامران حیدر 


     نظم                



مرے گھر کے ویران دریچوں سے
یوں اداسی ہم کلام ہوتی ہے
جیسے بیوہ کوئ بکھرے بالوں سے

ٹوٹی قبروں پہ بیٹھی روتی ہے

جیسے غربت کے جال میں جکڑی

آدمیت شباب کھوتی ہے

جیسے اکثر ویران راہوں پہ

دو قدم بھی چلنا مشکل ھو

جیسے لیلی کو بن مجنوں کے
اک پل بھی رہنا مشکل ہو
جیسے کوئ سچی بات______
ظالم سے کہنا مشکل ہو
مرے گھر کے ویراں دریچوں سے
یوں اداسی ہم کلام ہوتی ہے
اداسی میں خفا نہیں تم سے
درد اپنا جدا نہیں تم سے
آنسو یادیں تنہائ رسوائ
کیا ہے جو ملا نہیں تم سے
رہنے کو گھر دیا تھا_____
وہی دل جو بسا نہیں تم سے
مرے گھر کے ویراں دریچوں سے
یوں اداسی ھم کلام ہوتی ہے
اداسی اب کوئ اور ڈگر کر لے
جا ہم فقیروں سے درگزر کر لے
خون پیتے ہیں جو غریبوں کا
ان درندوں کے دل میں گھر کر لے
مقتل گاہ جو بول اٹھے تو
اک جہاں کو زیروزبر کر لے
اداسی اب کوئ اور آشیاں ڈھونڈیں
راہ مقتل کو جاتا نشاں ڈھونڈیں
آستینوں میں خنجر نہ لئے پھرتے ہوں
کہیں تو کوئ ایسا رازداں ڈھونڈیں
انصاف بکتا نہ ہو جدھر ایوانوں میں
آؤ مل جل کے وہاں اماں ڈھونڈیں
اداسی پھر کھو گیا کہیں تیرا حیدر
روز اس کو اب کہاں کہاں ڈھونڈیں
کامران حیدر

----------------------------------------------------------------------------------------------



مجھے اور کہیں لے چل سانول
جہاں شہر ہوں سارے ویرانے
جہاں لوگ سبھی ہوں بیگانے

جہاں سب کےسب ہوں دیوانے
جہاں کوئ ہمیں نہ پہچانے
مجھے اور کہیں لے چل سانول
جہاں نفرت دل میں بس نہ سکے
جہاں کوئ کسی کو ڈس نہ سکے
جہاں کوئ کسی پہ ہس نہ سکے
جہاں کوئ بھی گنجل کس نہ سکے
مجھے اور کہیں لے چل سانول
جہاں درد کسی کو راس نہ ہو
جہاں کوئ ملول اداس نہ ہو
جہاں ظلمت کی بو باس نہ ہو
جہاں تو بھی زیادہ پاس نہ ہو
مجھے اور کہیں لے چل سانول





SEARCH NAZAM
Reactions:

Post a Comment

 
Top